System Administrator for Fin-Tech Company

System Administrator for Fin-Tech Company

Question:

Salam,

Recently I have been offered Job as a ‘Systems Administrator’ with a ‘fin-tech’ company.

– My role will be to ensure that the software that our company provides is running smoothly and securely. I will NOT write the software myself. I will only ensure that is is deployed on the computers efficiently and make sure it is up and running securely and is fast.

– The ‘fin-tech’ is a new type of industry whereby they provide ‘financial technology services’ to other financial institutions. Our software is effectively API driven whereby other ‘financial technology services’ companies can use our software and create and manage their investment portfolios. Currently one of the shariah compliant inventment company is our biggest client but tomorrow any bank or any other finance company could come and use our software and they could invest in ‘non shariah’ compliant stocks/forex/bonds etc making use of our software, we can’t control that. Our company charges them fee for using our software.

Please advice if it will be halal for me to work there as a ‘systems administrator’

Answer:

In the name of Allah, Most Compassionate, Most Merciful,

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

There are many software’s offered by Fin-tech companies to banks and other institutions. Some of these software’s have a singular purpose while others have multiple purposes.

In principle, if the software has dual or multiple purposes and can be used for permissible activities as well as impermissible activities, then it is permissible to develop and maintain the software and market it for its permissible use.Thereafter, if an individual or company uses it for any impermissible activity, the responsibility of the same will be solely upon the user.[i]

If a software has a singular purpose which is used for Haram such as interest etc., then it will not be permissible to create or maintain such a software.

Accordingly, if you will be checking and ensuring the smooth running of software’s that may be used for multiple purposes, then it will be permissible.[ii] However, if the software that you will be checking is used only for Haram purposes such as calculating interest etc., then to ensure the smooth running of such singular purpose software’s and approving it’s use will not be permissible as that will be assisting in sin. Allah Ta’ala says:

وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ ۚ  (سورة المائدة: 2)

Translation: “Do not assist in sin and enmity.” (Surah Al-Maaidah: 2)

The use of the software for Haram will be directly attributed to your approval

And Allah Ta’āla Knows Best

Hammad Ibn Ismail Jogiat

Student - Darul Iftaa

Cambridge, Ontario, Canada

Checked and Approved by,

Mufti Ebrahim Desai.

فقه البيوع (1/311)[i] 

القسم الثالث: ما وضع لاغراض عامة ويمكن استعماله فى حالتها الموجودة فى مباح او غيره… والظاهر من مذهب الحنفية انهم يجيزون بيع هذا القسم

بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (4/ 189)[ii]

وعلى هذا يخرج الاستئجار على المعاصي أنه لا يصح لأنه استئجار على منفعة غير مقدورة الاستيفاء شرعا كاستئجار الإنسان للعب واللهو، وكاستئجار المغنية، والنائحة للغناء، والنوح بخلاف الاستئجار لكتابة الغناء والنوح أنه جائز؛ لأن الممنوع عنه نفس الغناء،

Contemporary Fatawa, P. 159-161, Idara-e-Islamiat

فتاوى عثماني – مفتى محمّد تقي عثماني –  مكتبة معارف القرآن (ج:3 ص:395) 

  بینک کی ملازمت کا تفصیلی حکم 

    در  اصل بینک کی ملازمت نا جائز ہونےکی دو وجہیں ہو سکتی ہیں،ایک وجہ یہ ہے کہ یہ ہے کہ ملازمت میں سود وغیرہ کے نا جائز معاملات میں اعانت ہے،دوسرے یہ کہ تنخاہ حرام مال سے ملنے کا احتمال ہےان میں سے پہلی وجہیں یعنی حرام کاموں میں مدد  کا جہاں  تک تعلق ہے،شریعت میں مدد کے مختلف درجے ہیں،ہر درجہ حرام نہیں،بلکہ صرف وہ مدد ناجائز ہےجو براہ راست  حرام کام میں ہوں،مثلا سودی معاملہ کرنا،سود کا معاملہ لکھنا،سود کی رقم وصول کرنا وغیرہ-لیکن اگر براہ راست سودی معاملہ میں انسان کو ملوث نہ ہونا  پڑے، بلکہ اس کام کی نوعیت ایسی ہو جیسے  ڈرائیور،چپراسی،یا 

جائز ریسرچ وغیرہ تو اس میں چونکہ براہ راست مدد نہیں ہے،اس لئے اس کی گنجا ئش ہے-جہاں تک حرام  مال سے تنخاہ ملنے کا تعلق ہے، اس کے بارے مین شریعت کا اصول ہے کہ اگرایک مال جلال وحرام سے مخلوط ہو اور حرام مال زیادہ ہو تو اس سے تنخواہ یا ہدیہ لینا ناجائز  نہیں، لیکن اگر حرام مال کم ہو تو جائز ہے-بینک کا  صورت حال  یہ ہے کہ اس کا مجموعی مال کئی چیزوں سے مرکب ہوتا 

ہے،1-اصل سرمایہ2-ڈپازیٹرز کے پیسے3-سود اور حرام کاموں کی آمدنی،4-جائز خدمات کی آمدنی،اس سارے مجموعے میں صرف نمبر3 حرام ہے،باقی کو حرام نہیں کہا جا سکتا، اور چونکہ ہر بینک میں نمبر 1 اور نمبر دو کی کثرت ہوتی ہے،اس لئے یہ نہیں کہہ سکتے کہ مجموعہ غالب ہے،لہذاکسی جائز کام کی تنخاہاس سے وصول کی جاسکتی ہے-یہ بنیاد ہےجس کی بناٰء پرعلماء نے یہ فتوی دیا ہے کہ بینک کی ایسی ملازمت جس میں خود کوئی حرام کام کرنا نہ پڑتا ہو، جائز ہے، البتہ احتیاط اس سے بھی اجتناب کیا جائے-

فتاوى دار العلوم زكريا – مفتى رضاء الحق –  زمزم ببليشر (ج:5 ص:659)

 ہاں بینک میں وہ شعبے جو سود سے متعلق نہیں ہے مثلا بینک میں چپراسي باورچي درائيونگ جاروب کشي وغیرہ کي ملازمت جائز اور درسست ہے اور تنخوااہ بھي حلال ہے

 فتاوى حقانية – جامعة دار العلوم حقانية (ج:6 ص:258)

Recent Comments

No comments to show.